جز: الم سورة ‎الفاتحة
بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِ﴿۱﴾

۱۔ بنام خدائے رحمن رحیم

اس سورہ کو فاتحۃ الکتاب (کتاب کا افتتاحیہ) کہا جاتا ہے اور یہ بات مسلّم ہے کہ سورتوں کے نام توقیفی ہیں۔ یعنی ان کے نام خود رسول کریم(ص)نے بحکم خدا متعین فرمائے ہیں۔ پس معلوم ہوا کہ قرآن عہد رسالت میں ہی مدون ہو چکا تھا جس کا افتتاحیہ "سورہ فاتحہ" ہے۔
ائمہ اہل بیت علیہم السلام کا اجماع ہے کہ بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ سورۂ برائت کے علاوہ قرآن کے ہر سورے کا جزو ہے۔ عہد رسالت سے مسلمانوں کی یہ سیرت رہی ہے کہ وہ سورۂ برائت کے علاوہ ہر سورے کی ابتدا میں بِسْمِ اللہِ کی تلاوت کرتے تھے۔ تمام اصحاب و تابعین کے مصاحف میں بھی بِسْمِ اللہِ درج تھی، جب کہ تابعین، قرآن میں نقطے درج کرنے سے احتراز کرتے تھے۔ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْم کا بِسْمِ اللہِ میں یکجا ذکر کرنے سے اللہ کے مقام رحمت کی تعبیر میں جامعیت آ جاتی ہے کہ الرَّحْمٰنِ سے رحمت کی عمومیت اور وسعت: وَرَحْمَتِيْ وَسِعَتْ كُلَّ شَيْءٍ (7: 156) " میری رحمت ہر چیزکو شامل ہے" اور الرَّحِيْمِ سے رحم کا لازمۂ ذات ہونا مراد ہے: كَتَبَ رَبُّكُمْ عَلٰي نَفْسِہِ الرَّحْمَۃَ (6: 54) "تمہارے رب نے رحمت کو اپنے اوپر لازم قرار دیا ہے" ۔ لہٰذا اس تعبیر میں عموم رحمت اور لزوم رحمت دونوں شامل ہیں ۔